• رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے عشق و محبت کا بیج دل میں بوؤیونہی آپکے ادب اور تعظیم کو جانِ ایمان س
  • انبیاء و اولیاء سے عقیدت رکھو ان کے آداب اور اعزاز میں کمی نہ کرو۔ یو نہی علمائے اہلسنت کے ساتھ پیش
  • اپنے رتبے سے بڑھ کر دعویٰ نہ کرو۔ہر وقت عجز وتواضع میں رہو۔
  • جس لیاقت کا جو آدمی ہو اس کی ویسی ہی عزت کرو۔
  • ہر اک کا حق پہچانو۔
  • جو راز کہنے کے قابل نہ ہو اُس کو منہ سے ہر گز نہ نکالو۔
  • دوست کی پہچان یہ ہے کہ وقتِ مصیبت کام آئے۔
  • احمق اور نادان آدمی کی صحبت سے کنارہ کرو۔
  • عقلمند اور دانا آدمی سے دوستی کرو۔

Most Viewed

  • Faiz e Aalam December 2017

    Faiz e Aalam December 2017

  • Gustakh Wald Al Haraam

    Gustakh Wald Al Haraam

  • AALA HAZRAT KAA QALMI JIHAAD

    AALA HAZRAT KAA QALMI JIHAAD

  • IMAM AHMED RAZA AUR FAN E TAFSEER

    IMAM AHMED RAZA AUR FAN E TAFSEER

 

Gustakhi Kis Cheez Ka Naam Hai (گستاخی کس چیز کا نام ہے؟)

Rating
Author
Faiz-e-Millat Mufti Faiz Ahmed Uwaysi
Language
Urdu
Category
Aqaid (عقائد)
Total Downloads
586
Total Views
1920
Date
2013-07-12
Total Pages
24
ISBN No
N/A
Read Online
Open Book
Download
Download (PDF)
Description:

Our society generally considers that blasphemy (insolence) means abusing or defaming anyone. In this booklet, Mufassir e Azam Pakistan (RadiAllaho anhu) has explained with the reference of Imam Suyooti’s (RadiAllahu Anhu) magazine [تنزیہ الانبیاء عن تسفیہ الاغبیاء] that speaking such words for Angels & Prophets which are not contemptible for them/used for evil people generally, are also included in insolence. Such words are used by common people & so called scholars, and when they are told about it, they give false explanations.

ہمارے معاشرے میں عام طور پر یہ سمجھا جاتا ھے کہ گستاخی شاید گالی دینے یا کسی پر عیب لگانے کا نام ھے۔ اس رسالے میں حضرت قبلہ مفسر اعظم پاکستان نے امام سیوطی رحمۃ اللہ علیہ کے رسالے 'تنزیہ الانبیاء عن تسفیہ الاغبیاء' کے حوالے سے یہ ثابت کیا ھے کہ ملائکہ و انبیاء کرام کے لیے ایسے الفاظ بولنا بھی گستاخی ھے جو ان نفوسِ قدسیہ کو کسی حقیر و قبیح شے سے تشبیہ دینے کے لیے استعمال کیے جائیں۔ اور ایسے الفاظ عوام بلکہ خود کو علماء کہلانے والے لوگ بھی کہہ گزرتے ہیں اور پھر انہیں مطلع کیا جائے تو طرح طرح کی تاویلیں گھڑنے لگتے ہیں۔ 

 
comments