• رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے عشق و محبت کا بیج دل میں بوؤیونہی آپکے ادب اور تعظیم کو جانِ ایمان س
  • انبیاء و اولیاء سے عقیدت رکھو ان کے آداب اور اعزاز میں کمی نہ کرو۔ یو نہی علمائے اہلسنت کے ساتھ پیش
  • اپنے رتبے سے بڑھ کر دعویٰ نہ کرو۔ہر وقت عجز وتواضع میں رہو۔
  • جس لیاقت کا جو آدمی ہو اس کی ویسی ہی عزت کرو۔
  • ہر اک کا حق پہچانو۔
  • جو راز کہنے کے قابل نہ ہو اُس کو منہ سے ہر گز نہ نکالو۔
  • دوست کی پہچان یہ ہے کہ وقتِ مصیبت کام آئے۔
  • احمق اور نادان آدمی کی صحبت سے کنارہ کرو۔
  • عقلمند اور دانا آدمی سے دوستی کرو۔

Most Viewed

  • Faiz e Aalam December 2017

    Faiz e Aalam December 2017

  • Gustakh Wald Al Haraam

    Gustakh Wald Al Haraam

  • AALA HAZRAT KAA QALMI JIHAAD

    AALA HAZRAT KAA QALMI JIHAAD

  • IMAM AHMED RAZA AUR FAN E TAFSEER

    IMAM AHMED RAZA AUR FAN E TAFSEER

 

Thandi Zohar (ٹھنڈی ظہر)

Rating
Author
Faiz-e-Millat Mufti Faiz Ahmed Uwaysi
Language
Urdu
Category
Fiqh (فقہ)
Total Downloads
25
Total Views
1509
Date
2013-07-13
Total Pages
19
ISBN No
N/A
Read Online
Open Book
Download
Download (PDF)
Description:

This is a superb booklet of Huzur Qibla Faiz Ahmed Uwaysi sahib (Rahmatullahi Alaih) in which he has proofed with the reference of Sahih Ahadith, that it is better to offer Zohar prayer after the sunlight has become somewhat milder.

Time of Zohar prayer starts just after the midday and ends when the shadow of the object is twice the length of the object (plus the length of the original object at noon). According to Ahnaaf (followers of imam Hanifa) and Ghair Muqallideen, offering Salat az Zohar anywhere between the starting and ending time is correct. But the difference in opinion is regarding the Afdal (best) time of Zohar salat in Summers.  Hanafi school says that offering salat-az-Zohar late, when the sunlight becomes somewhat milder is Afdal (best), while Ghair Muqallideen and Deobandis say that it is better to offer it in the very beginning (just after the midday).

یہ کتاب حضرت قبلہ فیض احمد اویسی رحمۃ اللہ تعالی علیہ کی مایہ ناز تصنیف ھے۔ جس میں انہوں نے صحیح احادیث کے حوالے پیش کر کے ثابت کیا ھے کہ نمازِ ظہر گرمی کی تیزی نرم پڑنے کے بعد پڑھنا افضل ہے۔ ظہر کا وقت سورج ڈھلنے کے بعد شروع ہو کر اس وقت تک ہے جب ہر شے کاسایہ (اصلی سایہ کے علاوہ) دوگنا ہو جائے۔ غیر مقلدین اور احناف کے نزدیک اوّل و آخر اوقات کے درمیان میں جب بھی ظہر کی نماز پڑھی جائے جائز ہے۔  لیکن اختلاف اس میں ہے کہ گرمیوں میں اوّل وقت میں پڑھنا افضل ہے یا گرمی کی تیزی کو ٹھنڈا کرکے۔ احناف کے نزدیک پچھلے وقت میں افضل ہے اور غیر مقلدین اور بعض دیوبندوں کے نزدیک اوّل وقت ھے۔

 
comments